مظفر آباد، پاسبان حریت کے زیر اہتمام زبردست احتجاجی مظاہرہ، وزیر اعظم سردار تنویر الیاس اور سابق وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر کا خطاب

مظفرآباد (آئی اے اعوان) بھارت کی جانب سے 5 اگست 2019 مقبوضہ جموں کشمیرکی خصوصی متنازعہ حیثیت کے خاتمے اور ریاست کو دو لخت کرنے کے خلاف آزاد کشمیر میں یوم استحصال منایا گیا ۔مظفرآباد کا آزادی چوک کشمیر کی آزادی اور بھارت مخالف نعروں سے گونج اٹھا پاسبان حریت جموں کشمیر کے زیر اہتمام دارالحکومت مظفرآباد میں احتجاج مظاہرہ کیا گیا اور آزادی چوک سے اقوام متحدہ کے مبصر دفتر تک احتجاجی ریلی نکالی گئی

وزیراعظم آزادکشمیر سردار تنویر الیاس اور سابق وزیراعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان نے آزادی چوک میں ریلی سے خطاب کیا اور گھڑی پن چوک تک ریلی کی قیادت کر کے بھارتی جارحیت کے خلاف اپنا احتجاج ریکارڈ کروایا یوم استحصال کے موقع پر آزاد کشمیر کے تمام اضلاع میں شہریوں کی بھاری تعداد سڑکوں پر نکل آئی ، بھارت سے آزادی کیلئے ہر محاذ پر جدوجہد کو جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا مظفرآباد میں مظاہرین نے اقوام متحدہ سے 5 اگست 2019 کے تمام غیر آئینی، غیر انسانی اور غیر جمہوری بھارتی سامراجی اقدامات کو کالعدم قرار دینے اور حق خودارادیت کے حصول کیلئے قرارد پیش کردی گئی ۔

ریاست جموں کشمیر کے تمام خطوں اور دنیا بھر میں مقیم کشمیری عوام نے 5 اگست 2019 کے بھارتی ظالمانہ اقدامات کیخلاف یوم احتجاج “یوم استحصال” منایا، بھارت کی طرف سے جموں کشمیر کا ریاستی درجہ ختم کرکے ریاست کو دو یونین ٹیریٹری میں تقسیم کر نے کے خلاف یوم استحصال کے موقع پر دارالحکومت میں پاسبان حریت جموں کشمیر کے زیر اہتمام احتجاج میں خواتین، بچے، نوجوان ، بزرگوں سمیت شہریوں کی بھاری تعداد نے شرکت کی ۔ 5 اگست 2019 کو بھارتی لوک سبھا میں ریاست جموں کشمیر کیخلاف کی گئی بدترین قانونی دہشتگردی کیخلاف شہریوں نےسیاہ پرچم لہرا کر اور پیشانیوں پر سیاہ پٹیاں باندھ کر احتجاج کیا شہریوں نےبھارتی حکومت، نریندرہ مودی اور قابض بھارتی فورسز کیخلاف شدید نعرے بازی بھی کرتے رہے۔

شہریوں نے بھارت سے آزادی، حق خودارادیت، شہدائے کشمیر کے حق میں فلک شگاف نعرے بھی بلند کیئے ۔ دارالحکومت میں منعقدہ”یوم استحصال” ریلی سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم آزاد کشمیر سردار تنویر الیاس خان نے کہا کا 5 اگست 2019 کے دن بھارتی اقدامات کشمیر دشمنی کا کھلا اظہار ہیں بھارت کشمیر میں زمینی حقائق نہیں بدل سکتا جب تک کشمیری عوام کو حق خودارادیت نہیں ملتا ہماری جدوجہد جاری رہے گی۔ سابق وزیراعظم ازاد کشمیر راجہ محمد فاروق حیدر نے کہا کہ مودی کو جان لینا چاہیئے کے کشمیری عوام اس کے ظلم کے سامنے سیسہ پلائی ہوئی دیوار بن کے  کھڑے رہیں گے ہم اپنی ریاست کی وحدت اور اکائی کا ہر صورت میں دفاع اور تحفط کریں گے۔ یوم استحصال ریلی سے محمد عثمان چاچڑ چیف سیکریٹری آزاد حکومت ریاست جموں کشمیر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کے منصفانہ اور دیرپا حل کیلئے ہمیشہ مثبت کردار ادا کرتا رہا ہے ، کشمیری عوام پر بھارتی مظالم پاکستان کیلئے ناقابل قبول ہیں ۔ انکا کہنا تھا کہ اہل پاکستان کشمیری بھائیوں کی جدوجہد کو مکمل سفارتی، اخلاقی اور سیاسی مدد جاری رکھیں گے، پاکستان بحیثیت مسئلہ کشمیر کے فریق کے 5 اگست کے اقدامات کو مسترد کر چکا ہے۔ عزیر احمد غزالی چیئرمین پاسبان حریت نے یوم استحصال ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج جموں کشمیر کے عوام اقوام متحدہ سے 5 اگست 2019 کے بھارتی سامراجی اقدامات کو کالعدم قرار دینے کا مطالبہ کرتے ہیں۔ کشمیری عوام یہ چاہتے ہیں کہ اقوامِ متحدہ انہیں سیاسی مستقبل کے تعین کیلئے حق خودارادیت کا موقع دیں۔

انہوں نے انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں سے بھارت کے زیر قبضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیوں کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ خواجہ فاروق احمد وزیر حکومت نے کہا کے 5 اگست کو نریندرہ مودی کی جانب سے مسلّط کردہ ظالمانہ اقدامات سے جنوبی ایشیاء کے اندر عدم استحکام پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔ انہوں کہا کہ کشمیری عوام مودی کے سامراجی اقدامات کو مسترد کرچکے ہیں۔ چوہدری محمد رشید وزیر حکومت نے کہا کہ اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے سامنے آ کر کردار ادا کرے دنیا اس بات کو جان لے کہ کشمیری عوام بھارت سے آزادی چاہتے ہیں۔ امن پسند اقوام کو کشمیر کے نہتے ععام کا ساتھ دینا چاہیئے ۔ چوہدری اکبر ابراہیم وزیر حکومت نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 5 اگست مودی کے ظالمانہ اقدامات کو دنیا نے قبول نہیں کیا آج ایک بار پھر کشمیری عوام عالمی برادری سے استصواب رائے کا مطالبہ دہرا رہے ہیں۔ شوکت جاوید میر راہنما پیپلز پارٹی نے کہا کہ آزاد کشمیر کے عوام آزادی اور حق خودارادیت کے سفر میں کشمیری عوام کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

ڈائیریکٹر کشمیر لبریشن کمیشن سجاد لطیف خان نے کہا کہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیری عوام اپنے حق کیلئے ہر محاذ پر جدوجہد کرنے کے مجاذ ہیں ریلی سے مشتاق الاسلام اور عثمان علی ہاشم نے بھی خطاب کیا۔ یوم استحصال کے موقع پر بھارت مخالف ریلی کا سینکڑوں شرکاء نے اقوامِ متحدہ کے مبصر دفتر تک مارچ کیا۔ ریلی کے شرکاء نے عالمج مبصرین کو حق خودارادیت کیلئے قرارداد پیش کی اور 5 اگست 2019 کے تمام غیر انسانی قوانین کو مسترد کرنے کا مطالبہ کیا۔ اقوامِ متحدہ کھ مبصر دفتر کے سامنے خواتین، بچوں اور بزرگوں نے “ویک اپ ویک اپ” “یو این او ویک اپ” اور “بھارتیو غاصبو جموں کشمیر چھوڑ دو” کے فلک شگاف نعرے لگائے ۔ شرکاء نے اقوامِ متحدہ کے مبصر دفتر کے سامنے شدید نعرے بازی بھی کی۔ یوم استحصال ریلی میں سیکرٹری صاحبان، ڈویژنل کمشنر ضلعی انتظامیہ سمیت سرکاری افیسرز اور ملازمین سیاسی، مذہبی قیادت سمیت مہاجرین کی بڑی تعداد نھ راہنماؤں سمیت شرکت کی۔