آئی فون صارفین کیلئے بُری خبر، سائبر حملے کا نشانہ بن گئے

اسلام آباد(پی این آئی) دنیا بھر میں ایک ارب سے زائد آئی فون مالکان سائبر حملے کا نشانہ بن گئے۔

سائبر فراڈ سے بچنے کے لئے ’’دوطرفہ تصدیق کا نظام’’ up two-factor authentication فوری آن کریں۔ ایپل کمپنی نے بیان جاری کردیا۔ایپل نے گزشتہ ہفتے ایک ارب سے زیادہ ڈیوائسز کو نشانہ بنانے والے سائبر حملے کے بعد تحفظ کے لیے تمام آئی فون صارفین کے لیے نئی گائیڈ لائنز جاری کی ہیں۔کمپنی نے صارفین کو خبردار کیا ہے کہ ہیکرز ذاتی تفصیلات جیسے سائن ان اسناد، سیکیورٹی کوڈز اور مالیاتی معلومات تک رسائی کے لیے کمپنی کے نمائندے ہونے کا بہانہ کرنے جیسے سوشل انجینئرنگ کے حربے استعمال کر رہے ہیں۔فشنگ ای میلز پر نظر رکھیں جو صارفین کو معلومات کا اشتراک کرنے یا رقم کے حوالے کرنے کے ساتھ ساتھ دھوکہ دہی والے پاپ اپ اشتہارات، جعلی پروموشنز، کیلنڈر کے ناپسندیدہ دعوت نامے اور جعلی کالوں کے ذریعے دھوکہ دیتے ہیں۔

اگر انہوں نے up two-factor authentication پہلے سے فعال نہیں کیا ہے، تو آئی فون مالکان کو فوری اسے آن کرنا چاہئے جس کے لیے ایک پاس ورڈ اور چھ ہندسوں کے تصدیقی کوڈ کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ کسی بیرونی ڈیوائس سے اپنے اکاؤنٹ تک رسائی حاصل کی جاسکے۔ایپل صارفین پر زور دے رہا ہے کہ وہ جعلی کالز سے ہوشیار رہیں۔ ممکنہ جعلی کالر آپ کے اکاؤنٹ کے بارے میں ذاتی معلومات یعنی آپ کے گھر کا پتہ، ملازمت کی جگہ یا یہاں تک کہ سوشل سیکیورٹی نمبر کا حوالہ بھی دے سکتے ہیں۔یہ فراڈ یا ممکنہ طور پر یہ دعوی کرے گا کہ اکاؤنٹ میں کوئی مسئلہ ہے اور کسی نے Apple Pay کا استعمال کرتے ہوئے غیر مجاز چارجز لگائے۔

جس پر صارفین اس کے ٹریپ میں آجاتے ہیں۔ایپل نے متنبہ کیا کہ سپوفنگ کالز عام طور پر آپ کو سوچنے کا وقت نہیں دیتیں جبکہ اسکیمرز آئی فون کے صارفین سے دو فیکٹر تصدیق یا چوری شدہ ڈیوائس پروٹیکشن جیسی خصوصیات کو غیرفعال کرنے کے لیے بھی کہہ سکتے ہیں۔کمپنی نے کہا کہ آپ کی ذاتی معلومات کو جاری کرنے میں دھوکہ دہی سے بچنے کے لیے جعلی ای میلز اور پیغامات کی شناخت کرنے کے طریقے موجود ہیں۔سب سے پہلے، صارفین کو یہ دیکھنے کے لیے بھیجنے والے کے ای میل یا فون نمبر کو دیکھنا چاہیے کہ آیا یہ کمپنی کے نام سے میچ کرتا ہے یا وہ آپ سے رابطہ کرنے کے لیے استعمال کیے گئے ای میل ایڈریس سے آپ کے اکاؤنٹ میں موجود نمبر سے مختلف ہے۔

دوسرے طریقوں میں یہ جانچنا شامل ہے کہ آیا انہوں نے جو URL لنک بھیجا ہے وہ Apple کی ویب سائٹ سے میل کھاتا ہے یا نہیں، اگر یہ پیغام کمپنی سے موصول ہونے والے دیگر لوگوں سے مختلف نظر آتا ہے اور اگر یہ ذاتی معلومات جیسے اکاؤنٹ کا پاس ورڈ یا کریڈٹ کارڈ نمبر مانگتا ہے۔اگر کسی صارف کو کوئی مشتبہ کال موصول ہوتی ہے، تو اسے فوری طور پر فون بند کر دینا چاہیے اور ایپل کو براہ راست کال کر کے موصول ہونے والے نوٹس کی تصدیق کرنا چاہیے یا وہ امریکی فیڈرل ٹریڈ کمیشن یا مقامی قانون نافذ کرنے والے اداروں کو اسکیم فون کالز کی اطلاع دے سکتے ہیں۔

ایپل کی وارننگ محض ایک ہفتے کے بعد آئی ہے جب اسکیمرز نے ایس ایم ایس فشنگ مہمات کا استعمال کیا تھا جس میں آئی فون صارفین کو جعلی پیغامات بھیجے گئے تھے کہ وہ iCloud کے بارے میں ایک ‘اہم درخواست’ کے لنک پر جائیں۔کیلیفورنیا میں مقیم Symantec سیکیورٹی فرم نے اس مہینے اس حملے کا پتہ لگایا، جس میں انتباہ کیا گیا کہ لنکس جعلی ویب سائٹس کی طرف لے جاتے ہیں جو صارفین کو اپنی ایپل آئی ڈی کی معلومات کے حوالے کرنے پر زور دیتے ہیں۔ایپل نے واضح کیا کہ اس کے معاون نمائندے صارفین کو کبھی بھی سائن ان کرنے کے لیے ویب سائٹ کے لنک پر نہیں بھیجیں گے یا ان سے ڈیوائس کا پاس ورڈ یا ٹو فیکٹر تصدیقی کوڈ فراہم کرنے کے لیے نہیں کہیں گے۔

close