غضنفر ہاشمی، امریکہ میں مقیم منفرد لہجے کے پاکستانی شاعر کا نمونہ کلام


کرونا وائرس کی وبا کے دنوں میں ایک اداس غزل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غبارِ دشتِ فنا میں ٹھہر گئے مرے لوگ
میں دیکھتا ہی رہا اور بکھر گئے مرے لوگ
خوش آرہی ہے بہت کُوئے رفتگاں کی سیر
کہ رہ گیا ہوں اکیلا، گذر گئے مرے لوگ
نکل کے دیکھ ذرا قصرِ آسمانی سے
ترے جہان میں کتنے ہی مر گئے مرے لوگ
عجیب ہجرتیں اس بار سر پہ آن پڑیں
کہ جانے والے نہیں تھے مگرگئے مرے لوگ
نہ جانے کیا تھا مرے قصہ گو کہانی میں
کہ آگ بجھنے لگی اور ڈر گئے مرے لوگ
میں آپ چھوڑ کے آیا تھا اپنی بستی کو
اور اب یہ پوچھ رہا ہوں کدھر گئے مرے لوگ
میں ناؤ بنتا ہوا ڈوب بھی گیا ہوں تو کیا
یہی بہت ہے کئی پار اتر گئے مرے لوگ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیسے موڑ پہ لے آیا وقت کا دریا
کہ پہلے ناؤ شکستہ تھی اب کنارہ گیا
یہ کارِ عمر تو اک کارِ رائیگانی تھا
مگر وہ دن جو تجھے دیکھ کر گذارا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سکوتِ شب سے کلام کرنے چلا گیا تھا
میں قصّہء درد عام کرنے چلا گیا تھا
جہاں پہ اک عمر اور کچھ خواب گِر گئے تھے
وہاں میں کچھ دن قیام کرنے چلا گیا تھا
یہ دل بہلتا نہیں تھا موجودگاں میں رہ کر
سو رفتگاں کو سلام کرنے چلا گیا تھا
کہیں یہ دنیا یہ گرد مجھ میں اتر نہ جا
میں دشتِ جاں میں خرام کرنے چلا گیا تھا
بہت دنوں سے تھے لفظ روٹھے ہوسو میں بھی
سخن سرا میں قیام کرنے چلا گیا تھا
یہیں کہیں تھا میں روزوشب کو تراشنے میں
یہیں کہیں صبح شام کرنے چلا گیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرے چارہ گر
وہ جو حرف میرے مقدروں میں لکھا گیا تھا کدھر گیا
وہ جو خواب گریہء نیم شب کے حصار میں کہیں آس پاس کنار چشم پہ اُگ رہا تھا کہاں گیا
وہ جو شام عرصہء ہجر میں مرے آنگنوں میں مثال صبح اُتر رہی تھی وہ کیا ہوئ
مرے چارہ گر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرے سامنے وہی ایک شہر مکالمہ ہے کھلا ہوا
مرے ہاتھ پر وہی ایک حرف کشود جاں ہے پڑا ہوا
مری آنکھ میں وہی حیرتوں کا ہجوم ہے
وہ ہجوم جس میں خود اپنی ذات سے اپنے خواب سے انحراف کے سلسلے ہیں قدم قدم
وہ ہجوم جس میں سوال تشنہ دہن کھڑے ہیں قطار میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مرے چارہ گر
کوئ اسم دے کوئی اذن دے
کہ میں چل پڑوں
کسی موج میں
کسی خواب اصل کی کھوج میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہیں کہیں سے مری روح جسم بنتی ہوئی
کہیں سے جسم کا ملبہ ہٹا دیا گیا ہے
اک اور خواب کے اندر میں سو رہا تھا ابھی
اک اور خواب میں مجھ کو جگا دیا گیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے اس روزوشب کے انجم اک دن میری چال میں آ
جس میں زندہ رہتا ہوں میں، تُو بھی ایسے حال میں آ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھسل رہا ہے جو اک حرف میرے ہونٹوں سے
عجب نہیں کہ اسی سے مکالمہ بن جائے



اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں