سرحدوں پرجھڑپیں، بھارت کسی بھی وقت پاکستان کیخلاف بڑی کارروائی کر سکتا ہے، خبردا ر کر دیا گیا


نیو یارک (پی این آئی) پاکستان نے عالمی برادری پرزوردیاہے کہ جنوبی ایشیاء میں بھارتی حکومت کی طرف پیدا کردہ اس دھماکہ خیز صورتحال کو تسلیم کرے جواس نے کنٹرول لائن (ایل او سی) کے ساتھ فوجی مہم جوئی بڑھانے کے ساتھ ساتھ مقبوضہ میں مسلسل جبراور کشمیر کے ساتھ ساتھ ہندوستان میں بھی مسلمانوں کو نشانہ بنانے سے پیداکی ہوئی ہے ۔عالمی برادری سے اس صورتحال کوتسلیم کرنے کایہ مطالبہ امریکہ میں پاکستان کے سفیر اسد مجید خان نے واشنگٹن ٹائمز میں شائع ہونے والے ایک مضمون میں کیا ہے ، جس میں انہوں نے یہ بھی انتباہ کیاکہ بھارت پاکستان کے ساتھ ایک اور محاذ آرائی شروع کرسکتا ہے۔انہوں نے لکھا ، “یہ جنگی ماحول پیدا کرنے کا وقت نہیں ہے اس ضمن میںانہوں نے اس بات کی نشاندہی بھی کی کہ اس وقت پاکستان ، بھارت اور کشمیری عوام کو کورونا وائر س کا مشترکہ اور جان لیوا خطرہ درپیش ہے۔انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کو یہ تسلیم کرنے کی ضرورت ہے کہ (وزیر اعظم نریندر) مودی کی حکومت نے جنوبی ایشیاء میں ایک دھماکہ خیز صورتحال پیدا کررکھی ہے جس کے بارے میں پاکستان نے پہلے ہی متنبہ کردیا تھا۔پاکستانی سفیر نے کہا کہ اس سلسلہ میںسب سے بڑھ کر ، امریکی قیادت کو اس تمام صورتحال کوتسلیم کرنے کی ضر ورت ہے۔صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پاکستان اور بھارت کے مابین کشمیر کے بارے میں ثالثی کی بار بار پیش کشوں کا ذکر کرتے ہوئے ، سفیراسد مجید خان نے کہا کہ امریکی رہنما دہائیوں پرانے تنازعہ کے حل کو جنوبی ایشیاء میں پائیدار امن و استحکام کے حصول اور خطے کی بے پناہ معاشی صلاحیت سے استفادہ کے لئے اہم ترین سمجھتے ہیں.پاکستانی مندوب نے مزید کہا ، “جو بھی جنوبی ایشیا کے لئے اس وژن میں شامل ہے وہ صدرٹرمپ کی پیش کش کا خیر مقدم کرتا ہے۔”انہوں نے کہا کہ 1947 کے بعد سے ہندوستانی حکومتوں نے مسلسل کشمیریوں پر ظلم برپا کیا ، جو اب ایک ‘ڈبل لاک ڈاؤن’ برداشت کر رہے ہیں ، اور انہیں ان کاحق خودارادیت دینے سے انکار کیا۔یہاں تک کہ کشمیر میں مودی سرکار کے تحت بھارتی سیکیورٹی فورسز کے ذریعہ غیرمعمولی طورپر ، تشدد اور انسانی حقوق کی پامالی کی جارہی ہے ایسے وقت میں جب دوسرے ممالک وبائی امراض سے لڑنے کے لئے آزادانہ، تبادلے اور معلومات کے تبادلے میں سہولت فراہم کررہے ہیں ، بھارت نے کشمیریوں کو معلوماتی بلیک ہول میں قید کردیا ہے ، بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے چھپ چھپ کر کشمیر میں آبادیاتی تبدیلی کو لاگو کرنے کے لئے ایک نیا آرڈیننس پیش کیا یہ سمجھنے کے لئے کہ کشمیر میں کیا ہورہا ہے اور اس کے ساتھ ہی بھارت بھر میں مسلم مخالف تشدد میں خوفناک اضافے کے لئے ، کسی کو بی جے پی کو جنم دینے والی ہندو قوم پرست نیم فوجی تنظیم ، راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (RSS) کی طرف جانا چاہئے۔آر ایس ایس کی ناپسندیدہ ابتداء کے بارے میں یہ کہنا کافی ہے کہ ہندوستان کی 8 لاکھ فوج کا کشمیریوں کو قیدکرنااور بھارت بھر میں مسلمانوں پر ظلم و زیادتی میں حالیہ اضافے کوئی حادثات نہیں ہیںبلکہ یہ آر ایس ایس کے نسل پرست ، ہندوتوا کے نظریے کا دانستہ نتیجہ ہیں۔ پاکستانی سفیراسد خان نے کہا کہ وزیر اعظم مودی کی پارٹی نے ووٹ ڈالنے کے لئے ایک آلہ کار کے طور پر بیانات اور مذہبی منافرت کو بھڑکانے کے فن میں مہارت حاصل کرلی ہے۔”چاہے وہ 2002 میں گجرات کا پروگرام تھا یا اس فروری میں نئی دہلی میں مسلم دشمن فسادات ، بی جے پی جب بھی انتخاباتمیں حصہ لیتی ہے تو وہ ہندوستانی مسلمانوں اور پاکستان کے خلاف نفرت پھیلانا شروع کردیتی ہے۔انتخابی کامیابی کے ساتھ بی جے پی اب اس مقام پر پہنچ گئی ہے کہ اب یہ اپنے اصلی ایجنڈے کو تقسیم کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کر رہی ہی: ہندوستان کو ہندو راشٹر میں تبدیل کرنا ، جہاں تمام مذہبی اقلیتیں مسلمان ، سکھ ، عیسائی اوردلت دوسرے درجے کے شہر ی ہیں۔”دراصل ، بی جے پی ہندوستانی مسلمانوں کو مکمل طور پر الگ تھلگ رکھنا چاہے گی جس کے لئے دسمبر میں ، اس نے ایک نیا قانون منظور کیا جس کے تحت حکومت بھارتی مسلمانوں سے ان کی شہریت چھین لے گی ، اور انہیں حراستی کیمپوں میں بھیجے گی ، جو اتفاق سے پہلے ہی زیر تعمیر ہیں۔لہذا ، کورونا وائرس وبائی امراض پھیلنے کے بعد سے ہندوستان میں مسلمانوں کا وسوسہ پھیلانا کوئی تعجب کی بات نہیں ہے۔بی جے پی نے کورونا جیسے سوزش والے ہیش ٹیگس کے ذریعہ سوشل میڈیا پر مہم چلاتے ہوئے ہندوستان کی پہلے سے پسماندہ مسلم کمیونٹی کو مزید بدنام کرنے کا موقع حاصل کیا جس کا نتیجہ یہ ہے کہ بھارت میں مسلمانوں کے ہسپتالوں میں علاج معالجے سے انکار کیا جا رہا ہے اور ان پرسڑکوں پر حملے کیئے گئے ہیں ۔دریں اثنا ، امریکی ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق کے دفتر نے بھارت کے نئے شہری قانون کے بارے میں تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے “بنیادی طور پر امتیازی سلوک” قرار دیا ہے۔اپریل میں ، بین الاقوامی مذہبی آزادی کے بارے میں امریکی کمیشن نے بھارت بھر میں ، خاص طور پر مسلمانوں کی مذہبی آزادی کی خلاف ورزی کرنے والی قومی سطح کی پالیسیوں پر بھی نکتہ چینی کی۔پاکستانی سفیر نے کہاکہ ا س طرح کے بیانات خوش آئند ہیں تاہم ان بیانات میں جنوبی ایشیاکو لاحق سنگین خطرات کا مکمل طور پر احاطہ نہیں کیاگیاہے ۔



اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں