A Product of PNI Digital (SMC-Pvt) Limited

قاری سفیر اختر سلیمانی، ای ایس ٹی (عربی) گورنمنٹ ہائی سکول روہتاس، جہلم، تعارف اور خدمات


نام:-قاری سفیر اختر سلیمانی
عہدہ:- ای۔ایس۔ٹی (عربی) GHS روہتاس تحصیل دینہ
رہائش:- کلرہ شریف نزد ڈومیلی

تعلیمی قابلیت؛-
✓ پرائمری تعلیم GPS کلرہ شریف
✓ میٹرک GHSS ڈومیلی
✓ فاضل عربی جامعہ عربیہ اسلامیہ محمدی چوک جہلم شہر استاذ العلماء علامہ صوفی محمد اسلم نقشبندی صاحب کے پاس مکمل کیا
✓ درس نظامی ( الشھادۃ العالمیہ) مساوی ایم اے عربی ، اسلامیات جامعہ عربیہ اسلامیہ محمدی چوک جہلم شہر
ایف۔اے اور بی۔اے پرائیویٹ
ملازمت :-
✓ نومبر 2009 میں GES پنچور سے ملازمت کا آغاز کیا
✓ اگست 2011 میں GHS سوہاوہ میں تبادلہ ہوا
✓ مارچ 2014 میں GES موہڑہ کلیال میں ریشنلائیزیشن کے تحت تبادلہ ہوا

✓ ستمبر 2016 میں GHS گتر میں تبادلہ ہوا
✓ دسمبر 2018 میں باہمی تبادلہ کروا کے GHS روہتاس میں تبادلہ کروایا تاحال روہتاس میں تدریسی فرائض سر انجام دے رہا ہوں
خدمات :- 2006 سے تا حال خطابت کے فرائض سر انجام دے رہا ہوں اب جامع مسجد معصومیہ بگوالہ شریف میں خطابت کر رہا ہوں میرا چھوٹا بھائی توصیف اختر سلیمانی اگست 2017 سے تا حال GHS رامدیال میں بطور ای۔ایس۔ای (سائنس۔میتھ) خدمات سر انجام دے رہا ہے۔۔۔۔

عمران خان کی حکومت گرانے کے بعد پی ڈی ایم کس کو وزیراعظم بنائیگی؟ استخارہ کر لیا گیا

اسلام آباد (پی این آئی) جے یو آئی ف کے رہنما مفتی کفایت اللہ کا کہنا ہے کہ انہوں نے استخارہ کیا ہے، مولانا فضل الرحمن وزیراعظم بنیں گے۔اسی حوالے سے ان سے ایک سوال کیا گیا کہ اگر پی ڈی ایم حکومت کو گرانے میں کامیاب ہو جاتی ہے تو کیا مولانا وزیراعظم بنیں گے۔اس بات کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ بتانا تو علم غیب ہے کہ اگلا وزیراعظم کون ہو گا۔نواز شریف کا بھی بیان آیا ہے کہ اگر یہ حکومت پی ڈی ایم کے نتیجے میں جاتی ہے تو بے شک پہلے وزیراعظم مولانا فضل الرحمن بن جائیں۔دوسری باری پیپلز پارٹی کی ہو اور آخری باری ہماری ہو۔جس طرح میں نے اندازہ لگایا اس طرح نواز شریف نے بھی اندازہ لگا لیا۔مفتی کفایت اللہ نے کہا کہ نواز شریف نے یہ بات اس لیے کی کہ اگر پی ڈی ایم جماعتیں جیت جاتی ہیں تو اپنائیت پیدا کر کے وزارت عظمیٰ کے لیے باریاں لی جائیں۔مفتی کفایت اللہ سے مولانا فضل الرحمن کی جائیدادوں سے متعلق سوال کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ ہمارا سوال یہی ہے نہ کہ اگر مولانا پر کوئی الزام ہے تو میڈیا پر بات کرنے سے تو کسی کو کیفر کردار تک نہیں پہنچایا جا سکتا۔آپ کی حکومت مرکز میں بھی ہے اور صوبے میں بھی ہے، ہاتھ ڈالو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا۔آپ جب ہاتھ نہیں ڈالتے تو شک ہوتا ہے کہ معاملہ کچھ بھی نہیں ہے۔مفتی کفایت اللہ کا کہنا ہے کہ نیب ہمیشہ سیاسی انتقام کے لیے استعمال ہوا ہے۔ہماری جماعت کا موقف تھا کہ نیب کو سیاست سے الگ ہونا چاہئیے۔اگر مولانا پر کوئی الزام ہے تو میڈیا پر بات کرنے سے وہ سچ ثابت نہیں ہو گا،آپ کے پاس ادارہ بے بسم اللہ کرو۔



اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں